Khabardar E-News

بلوچستان کے سرکاری اسکولوں کے لیے کتابیں بازار میں فروخت ہونے لگی

214

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

کوہلو ( خبردار نیوز ) محکمہ تعلیم کے عجیب کارنامے منظر عام پر آنے لگے محکمہ تعلیم کی کتابیں اسکولوں

کے بجائے شہر میں فروخت ہونے لگے

کوہلو میں تعلیمی محکموں کی کارکردگی پر سوالیہ نشان لگ گیا مقامی ٹال (کباڑ خانہ) میں ایک درجن سے

زائد کتابیں فروخت کی گئی

وزیر اعلی بلوچستان کی ہنگامی اقدامات کے دعوں کے برعکس محکمہ تعلیم کے آفیسران خواب خرگوش کی

نیند سورہے ہیں

ضلع کے مختلف تحصیلوں اور اسکولز میں تاحال سال 2024 کی کتابیں نہیں پہنچ سکی شہر کے وسط میں

واقعے گورنمنٹ ماڈل ہائی سکول کے بچے تدریسی نصاب کتابوں سے محروم ہیں

گورنمنٹ ماڈل ہائی سکول کے بچوں نے مقامی صحافی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ تدریسی نصاب سے

محرومی کے باعث تعلیم سے قاصر ہیں مزکورہ کتابیں سرکاری سکولوں کے بچوں کو مفت دی جاتی ہیں ۔

والدین کا ” ناٹ فار سیل” کتابیں فروخت کرنے پر تشویش کا اظہار کیا ہے

واضع رہے کہ کوئٹہ سمیت صوبے کے دیگراضلاع میں ابھی تک بہت سے ایسے سرکاری اسکولز ہیں جہاں

سرکار کی جانب سے مفت فراہم کی جانے والی کتابیں نہیں پہنچ سکی ہیں

جس کے باعث غریب طلبہ وطالبات کے ساتھ ساتھ انکے والدین بھی پرشیان ہیں

یادر ہے کہ بلوچستان کے سرد علاقوں میں نئے تعلمی سال کا آغاز مارچ کے پہلے ہفتے سے ہوچکا ہے

Comments are closed.