Khabardar E-News

کوئٹہ : لاس نائیک شبیر احمد کی تدفین پورے فوجی اعزاز کے ساتھ کردی گئی

6

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

کوئٹہ ( خبردار نیوز) گزشتہ روز شمالی وزیرستان میں سیکیورٹی فورسز کی دہشتگردوں کیخلاف آپریشن میں

شہید ہونیوالے لاس نائیک شبیر احمد کی تدفین مکمل فوجی اعزاز کے ساتھ آج ہزارہ قبرستان ہزارہ ٹاون میں

کردی گئی۔

شمالی وزیرستان میں گذشتہ روز دھشت گردوں کے خلاف جام شہادت نوش کرنے والے نوجوان لاس نائیک

شبیر احمد کی میت کو آج کوئٹہ میں پورے فوجی اعزاز کے ساتھ سپرک خاک کردی گئی

اس موقع پر ہزارہ ٹاون کے قبرستان میں انکی میت کوسلامی پیش کی گئی اور شہید کی قبر پر پاکستان کا قومی

پرچم لہرایاگیا

اس موقع پر شہید شبیر احمد کے عزیز و اقارب سمیت اعلی سول فوجی حکام ارکان صوبائی اسمبلی اور

شہریوں کی بڑی تعداد موجود تھی

بعد میں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوے شبیر شہید کے والد کے کہا کہ ملک اور وطن کے لیے انکی قربانی پر

انہیں فخر ہے اور انکا چھوٹا بیٹا بھی فوج میں جانے اور ملک کی دفاع کے لیے جام شہادت نوش کرنے لیے

تیار ہے

کوئٹہ : لاس نائیک شبیر احمد کی تدفین پورے فوجی اعزاز کے ساتھ کردی گئی

شبیر شہید کی شہادت پر فخر کا اظہار کرتے ہوے انکے چھوٹے بھائی نے کہا کہ میرے نمازی اور ہر وقت

تلاوت کرتے تھے اور کہا کرتے تھے کہ ملک کے لیے کسی قربانی سے دریغ نہیں کرونگا

انہوں نے کہا کہ میرے دوسرے بھائی رشتہ دار بھی فوج میں جانے کےلیے تیار ہیں بالخصوص میں میٹرک

کے فورا بعد پاک آرمی کو جوائن کرونگا-

دریں اثناء سینئر صوبائی وزیر خزانہ حاجی نور محمد دمڑ نے شمالی وزیرستان میں دہشت گردوں کے خلاف

آپریشن میں کوئٹہ سے تعلق رکھنے والے شہیدلانس نائیک شبیر احمد کی شہادت پر افسوس،غم کا اظہارکیا ہے

پیر کو کوئٹہ میں جاری ہونے والے ایک بیان میں صوبائی وزیر خزانہ نے کہا کہ قوم کے شہدا کی قربانیاں

ملکی استحکام اور عظمت کی نشانیاں ہیں۔ اور پاکستان کے شہدا کی عظیم قربانیوں کی بدولت آج ہمار ملک قائم

و دائم ہے ،

وزیر خزانہ مذید کہا کہ وطن کی حفاظت کی خاطر جانوں کا نذرانہ پیش کرنے والے پاک فوج کے جوان عزت

و احترام کے مستحق ہیں ،

اور پاکستان کو فخر ہے دشمن بھی ان کی بہادری کے معترف ہیں ۔

آخر میں انہوں نے شہداءکے اہل خانہ سے دلی ہمدردی اور تعزیت کا اظہار  شہداءکے درجات کی بلندی اور

پسماندگان کے لئے صبر جمیل کی دعا ہے

Comments are closed.