Khabardar E-News

شہداوطن کی یاد میں 26 نومبر کو چمن میں اے این پی کا پاور شو

63

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

چمن(نامہ نگار)عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری مابت کاکا نے کہا ہے کہ 26 نومبر کو شہدا

وطن شہید خان جیلانی خان اچکزئی کی 13ویں شہید اسدخان اچکزئی کی تیسری برسی اور شہید ارباب غلام

ايڈوکیٹ کی چہلم ایسے حالات میں منانے جارہے ہیں جب پشتون افغان قوم کو بقاء کا مسئلہ لاحق ہوچکا

چارعشروں سے آگ خاک وخون میں نہلا دینے والے افغان قوم کی اب معاشی قتل عام جاری ہے پشتونوں کو

اس نازک اور گھمبیر صورت حال کا ادراک کرناہوگا ورنہ فنا ہونے میں دیر نہیں لگے گی

ڈیورنڈ لائن پر پاسپورٹ کا اجرا محنت کش غریب پرور افراد کو نان شبینہ کا محتاج بنانا ہے افغان کڈوال

کیساتھ روا رکھا جانیوالا توھین آمیز تضحیک آمیز کی مستقبل قریب میں خطرناک نتائج برآمد ہوں گے

حکمران اشرافیہ کی جانب سے نگران حکومتوں کے زریعے ان حساس معاملات کو روبہ عمل لانا غیر

سنجیدگی کا مظہر ہے چمن کے غیور اولس سول سوسائٹی قبائلی عمائدین نوجوانوں سے 26نومبر کو ماڈل ہائی

سکول فٹ بال گراونڈ میں منعقد جلسہ عام میں بھر پور شرکت کی اپیل کرتے ہیں

پارٹی کارکن اور ذمہ داران جلسہ کامیابی مہم کو تیز تر کردیں ان خیالات کا اظہار انہوں نے کلی میرالزئی اور

گلدار باغیچہ میں جلسہ آگاہی مہم کے سلسلے میں اولسی تقاریب سے خطاب کے دوران کیا

اولسی تقاریب سے ضلعی آرگنائزر صلاح الدین وطن یار ڈپٹی آرگنائزر عبدالخالق حقمل چئیرمین گل زمان نواب

خان کلیم اللہ سمیع اللہ اچکزئی حاجی عبدالمنان مرتضی حاجی عبداللہ جان فیض محمد عبدالرزاق بابو نے بھی

خطاب کیا

مقررین نے کہا کہ امسال شہدا وطن کی یاد ایسے حالات میں منانے جارہے ہیں جب پشتون افغان وطن موت

وزیست کے دہانے کھڑی ہے طویل نسل کشی کے بعد اب ان کی معاشی قتل عام جاری ہے

یہ حالات ہم سے بحثیت قوم غور وفکر کا تقاضا کرتاہے انہوں نے چمن کے غیور اولس سے 26 نومبر کو

چمن ماڈل ہائی سکول فٹ بال گراونڈ میں شہدا کی وطن کی یاد میں منعقدہ جلسہ عام میں شرکت کی اپیل کی

اس سے پہلے عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری مابت کاکا پارٹی ذمہ داران اور جلسہ گاہ کمیٹی

کے ہمراہ 26نومبر کو شہدا وطن کی یاد میں منعقد جلسہ عام کیلئے مختص جلسہ گاہ کا معائنہ کیا

اب تک مختلف انتظامی کمیٹیوں کی جانب سے کئے گئے اقدامات کا جائزہ لیا اور اس بابت مختلف آرا اور

تجاویز کو زیر بحث لایا گیا

Comments are closed.