Khabardar E-News

سندھ ہاوس پر دھاوا،سپریم کورٹ کاحکومت اور اپوزیشن کو نوٹس

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اسلام آباد ( خبردار ڈیسک ) سپریم کورٹ نے جمعہ کے روز سندھ ہاوس پر پی ٹی آئی کے دو ارکان قومی

اسمبلی اور بعض کار کنوں کی جانب سے دھاوا بولنے کے خلاف ایک درخواست گزار کی درخواست کی

سماعت کی

ہفتہ کو درخواست کی سماعٹ کرتے ہوے چیف جسٹس جناب جسٹس نے کہا کہ درخواست گزار کی استدعا

سیاسی تناظر میں ہے

اور عدالت نے ملک کے سیاسی تناظر کو نہیں ائین کو دیکھنا ہے

انکے مطابق قانون پر عملدرار ہونا چاہیے

چیف جسٹس نے کہا کہ انہیں اخبارات سے معلوم ہوا کہ 63 اے کے حوالے سے حکومت بھی سپریم کورٹ آ

رہی ہے

اوراٹارنی جنرل سے استفسار کیا کہ کیا حکومت بھی معاملے پر سپریم کورٹ ا رہی ہے ؟

سپریم کورٹ بار لا اینڈ آرڈر کے حوالے سے خدشات رکھتی ہے

لیکن اس کیس میں ہم نے از خود نوٹس نہیں لیا بلکہ دائر درخواست کو سن رہے ہیں

اور ایک ایسا واقعہ ہوا ہے جو آزادی اظہار راے کے آئینی حق کے بر خلاف ہے

جس پر اٹارنی جنرل نے کہا کہ اس بارے میں تو کوئی دوسرا سوال نہیں ہے

چیف جسٹس نے کہا کہ کچھ حکومتی ممبران سندھ ہاوس میں تھے

جس پر آٹارنی جنرل نے کہا کہ حکومتی ممبران کا سندھ ہاوس میں ہونے نے سیاسی ماحول کو گرما دیا

اور اچانک سیاسی درجہ حرارت بڑھا اور یہ واقعہ رونما ہوا

اٹارنی جنرل کے مطابق عوام پر امن احتجاج کا حق رکھتے ہیں

آخری اطلاع تک سپریم کورٹ میں سیاسی حالات سے متعلق سپریم کورٹ بار کی درخواست پر سماعت جاری

ہے اور چیف جسٹس آف پاکستان کی سربراہی میں دو رکنی بینچ سماعت کر رہا ہے

واضع رہے کہ گذشتہ روز پی ٹی آئی کے دو ارکان قومی اسمبلی سمیت دو درجن سے زاہد کارکنوں نے اسلام

آباد میں اس وقت سندھ ہاوس پر دھاوا بول دیا تھا جب وہا ں بعض منحرف ارکان موجود تھے

Comments are closed.