Khabardar E-News

بلوچستان ہائی کورٹ کا منشیات کی بڑتی ہوئی لعنت پرتشویش کا اظہار

3

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

مستونگ ،قلات ( نا مہ نگار) بلوچستان ہائیکورٹ کے جج صاحبان جناب جسٹس عبداللہ بلوچ جسٹس عبدالحمید

بلو چ کا ایک روزہ دورہ قلات جج صاحبان نے جوڈیشل لاک اپ اور ڈسڑکٹ بار قلات کادورہ کیا

جج صاحبان نے جوڈیشل لاک اپ قلات کی خستہ حالی پر شدید برہمی کا اظہار کیا اور جو ڈیشل لاک اپ کو

ایک ہفتے کے اندر اندر ایک محفوظ جگہ پر منتقل کرنے کے احکامات جاری کیئے

جوڈیشل لاک اپ سابق ریاست قلات کی گھڑوں کا اصطبل تھا جسے بعد ازاں جو ڈیشل لاک اپ ک درجہ دیا گیا

تھا جوکہ اب انتہائی خستہ حالت میں ہے جوکو کسی بھی وقت گر سکتی ہے

جج صاحبان نے قلات بار میں ڈیجیٹیل لائبریری کا بھی افتتاح کر دیابلوچستان ہائیکورٹ کے جسٹس عبداللہ بلوچ

نے قلات بار روم سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جیل اصلاح کی جگہ ہے

مگر بد قسمتی سے قلات میں گھڑوں کے اصطبل میں قیدیوں کو رکھا گیا ہے

بلوچستان ہائی کورٹ کا منشیات کی بڑتی ہوئی لعنت پرتشویش کا اظہار

اس خستہ حال اصطبل سے قیدیوں کو مناسب جگہ پر منتقل کیا جائے

انہوں نے کہا کہ عدالت کا کام عوام کو سستا اور جلد انصاف فراہم کرنا ہے

اس لیئے جج صاحبان زیر التوا کیسیز کو جلد نمٹا نے کے لیئے اقدامات کرے

انہوں نے کہا کہ وکلا مثبت طریقے سے فعال کر دار ادا کرے

کیونکہ ان کے بغیر زیر التوا کیسز کو جلد نمٹا نا ممکن نہیں ہو تا

انہوں نے وکلا سے کہا کہ وہ بلوچستان ہائی کورٹ کے وزٹ کیا کرے

اور دیکھے کہ وہا کیسز کیسے نمٹائے جاتے ہیں

انہوں نے کہا کہ قلات جوڈیشل کمپلیکس کے لیئے تین کروڑ روپے منظور ہو گئے ہیں

جن کے ٹینڈز بھی ہو گئے ہیں اور کا م کا آغاز جلد شروع کیا جائیگا

انہوں نے کہا کہ سوراب جو ڈیشل کمپلیکس کو جلد مکمل کیا جائے گا خضداد میں سرکٹ بینیچ کو فعال کر نے

کے لیئے اقدامات کیئے جارہے پیں جو جلد یا بہ دیر اپنا کام شروع کر دے گی

انہوں نے کہا کہ بار کونسل کے مسائل سے آگاہ ہیں ان کے حل کے لیئے اقداما کیئے جا ئیں گے

اس مو قع پر سیشن جج قلات بشیر احمد بادینی جو ڈٖیشل مجسٹریٹ فائزہ بختاور قاضی مجلس شوریٰ قاضی

محمد ممبرمجلس شوریٰ غلام نبی ممبر مجلس شوریٰ حفیظ الرحمان اور دیگر بھی موجود تھے

کوئٹہ شہر منشیات کے عادی افراد کے نرغے پر

اس سے قبل بلوچستان ہائی کورٹ کے ججز نے دورہ مستونگ کے دوران مستونگ میں منشیات کے پہلاوں پر

سخت تشویش کا اظہار اور پولیس و انتظامیہ کی سخت سرزنش کی

جسٹس عبدالحیمد بلوچ نے افسوس کا اظہار کیا کہ پولیس لیویز کو یہ معلوم نہیں

کہ منشیات کون اور کہاں سے آرہاہے

انہوں نے مستونگ شہر سمیت تمام علاقوں سے منشیات کےخاتمے کے لئے فوری کاروائی کی ہدایت۔

اور کہا کہ منشیات پہیل رہاہے یہ ہمارے آنیوالے نسلوں کیلئے تباہ کن ہے

جسٹس عبدالحیمد بلوچ واضع کہا کہ اگر ہم نے اس کی تدارک نہیں کیا

تو ممکن ہیکہ یہ آئندہ کنٹرول نہیں ہوگا اور ضلعی انتظامیہ سے کہا کہ آئندہ اس حوالے سے کوئی شکایت نہیں

آنا چاہیے

کیونکہ ہمارا نوجوان نسل منشیات کی وجہ سے تباہ ہورہاہیں۔

Comments are closed.