Khabardar E-News

فائیو جی ٹیکنالوجی خطرناک ہے؟

153

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

جدید دور میں ماہرین تیز سے تیز ترٹیکنالوجی متعارف کرانے کی دوڑ میں مصروف ہیں۔خواہ وہ کمپیوٹنگ ڈیوائسز ہوں ،لیب ٹاپ ہوں یا اسمارٹ فون، ہماری خواہش ہوتی ہے کہ وہ دی ہوئی کمانڈ کے نتائج سیکنڈوں میں ظاہر کردیں۔آج ایساہونا کافی حد تک ممکن بھی ہوگیا ہے ،کیوںکہ بہت سے کام کمپیوٹر ڈیوائسز سیکنڈوں میں انجام دے دیتے ہیں۔پھر بھی کچھ ایسے کام ہیں جنہیں مکمل ہونے میں تھوڑا وقت درکار ہوتا ہے جیسے کہ بھاری ملٹی میڈیا فائلز،ایپ اور سافٹ وئیرز وغیرہ کی ڈائون لوڈنگ۔ ماضی کے مقابلے میں موجودہ دور کی ٹیکنالوجی بہت تیز ہے۔ اس کی ایک مثال کمپیوٹر کی تمام خصوصیات کا سیل فون میں سما نا ہے ۔اب صارفین کے ساتھ ماہرین کی توجہ کا مرکز بھی اسمارٹ فون اور سیلولر ٹیکنالوجی ہے ۔اسی وجہ سے سیلولر ٹیکنالوجی 1 جی ،2جی ،3 جی اور 4 جی سے آگے بڑھ کر 5 جی کے حیران کن اور تیز ترین دور میں داخل ہورہی ہے۔

آج پوری دنیا میں موبائل فون نیٹ ورک کی ففتھ جنریشن(5 جی ) متعارف کرانے کے لیے تیاری کی جاری ہے ۔ماہرین کے مطابق اس جنریشن میں ہائی فریکوئنسی اور بینڈ وتھ استعمال کی جائے گی۔اس کے ذریعے صارفین ماضی کے مقابلے میں کئی گنا تیزی سے فائلز، گانے ،ویڈیوز اور ایپس ڈیٹا ڈائون لوڈ اور اپ لوڈ کر سکیں گے ۔اس ٹیکنالوجی سے فی سیکنڈ دس گیگا بائٹ منتقل ہوسکتے ہیں ۔اب تک جی نیٹس کے لیے سات سو میگا ہرٹز سے چھ گیگا ہرٹز کی فریکوئنسیز استعمال کی جارہی تھیں ۔لیکن 5 جی میں اٹھائیس سے ایک سو گیگا ہرٹز کے درمیان فریکسوئنسیز استعمال کی جائیں گی۔ایک رپورٹ کے مطابق 4 جی انٹر نیٹ 3 جی سے دس گنا زیادہ تیز تھا لیکن 5 جی ،4 جی کے مقابلے میں ایک ہزار گنا تیزی سے کام کرے گا ۔سویڈن کی ایک ٹیلی کمیونی کیشن کمپنی کے مطابق2024 ء میں دنیا کی چالیس فی صد آبادی 5 جی ٹیکنالوجی استعمال کررہی ہوگی۔

Comments are closed.