Khabardar E-News

حکمرانوں سے جان چھڑاناقومی فریضہ بن چکاہے،مولانافضل الرحمان

102

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

ہم ناجائز حکمرانوں کا سفینہ ڈبونے نکلے تھے لیکن اپوزیشن والے خود اپنا ہی سفینہ لے ڈوبے ،رابطے میں ہوں نئی تحریک کا آغاز پنجاب سے کریں گے
آنے والے چند مہینوں میں پھر سے سڑکوں پر آنا چاہتے ہیں،نئی تحریک کا آغاز پنجاب سے کرینگے‘ان ہائوس تبدیلی اور قبل از وقت انتخابات دونوں دیکھ رہا ہوں،
لاہور( این این آئی) جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانافضل الرحمان نے کہا ہے کہ 20 جولائی 2018 کے بعد سیاستدانوں نے جو متفقہ بیانیہ دیا ہمارا وہی بیانیہ چل رہا ہے اور ہم آنے والے چند مہینوں میں پھر سے سڑکوں پر آنا چاہتے ہیں،نئی تحریک کا آغاز پنجاب سے کریں گے،ان ہائوس تبدیلی اور قبل از وقت انتخابات دونوں دیکھ رہا ہوں،اپوزیشن کی وحدت سے حکومت کمزور ہوتی ہے اور اگر اپوزیشن بکھر جائے تو حکومت کو کمزور نہیں کیا جا سکتا۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کسی سرکاری آفیسر کی تقرری کو سیاسی مسئلہ نہیں بنانا چاہیے لیکن حکومت نے خود توسیع کے مسئلہ کوعدلیہ میں گھسیٹا۔ خود عدالت میں سمریاں بھیج کر اس معاملے کو پیچیدہ بنایا گیا اور ادارے کو بے توقیر کرنے کی کوشش کی گئی ۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے قانون سازی میں حصہ نہ لے کر ناجائز اسمبلی اور نااہل ہونے کے حوالے سے اپنے بیانیہ کو ترویج دی ۔ انہوںنے کہاکہ نوازشریف اورشہبازشریف سے فون پر بات کی ،پیپلزپارٹی سے بھی بات ہوئی ،پیپلزپارٹی نے ترامیم کی بات کی لیکن پھر وہ بھی واپس لے لیں اگر ووٹ دینا تھا تو پھرمندرجات کو سامنے رکھتے ۔انہوں نے کہا کہ (ق )لیگ کی قیادت کے ساتھ ہم نے اس بات پر اتفاق کیا کہ دینی مدارس کو ہر صورت آزاد رکھا جائے گا، دنیا نے مذہبی مدارس کا منفی تاثر دیا ہوا ہے، دینی مدارس ہمارے ملک کی جڑیں ہیں اور وہ کمزور جڑیں نہیں ہے، ہمیں اپنے تعلیمی نصاب پر اطمینان ہے،مدارس کے نظام کو قانونی حیثیت حاصل ہے اور ہم مدارس کی آزادی کے حوالہ سے ایک مربوت نظام بنانا چاہتے ہیں۔انہوںنے کہاکہ اتحاد تنظیمات دینیہ کے رہنمائوں سے ملاقات ہوئی ،اب تک حکومت کے ساتھ مدارس کے متعلق مذاکرات ہوئے ہیں مدارس پر کچھ معاہدات بھی ہوئے اس پر مشاورت کی گئی اس بات پر اتفاق ہے مدارس کی آزادی کو برقرار رکھیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ حکمران کبھی کہتے دینی مدارس کی اصلاحات کر رہے ہیں اور کبھی کہتے ہیںقومی دھارے میں لا رہے ہیں ،یہ باتیں منفی رحجان پیدا کرتی ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم کے مطابق قوم وقت اس پوزیشن میں ہے اسے قبر میں اتار دیا گیا ہے ، یہ ملک کو کہاں لے کر جانا چاہتے ہیں ،حکمرانوں سے جان چھڑانا قومی فریضہ بن چکا ہے ،نااہل حکمران کیوں قوم پر حکومت کریں ،آزادی مارچ میں عوام کا فیصلہ سامنے آ گیا تھا ،دس لاکھ افراد مارچ میں شریک ہوئے تو کیا فیصلہ ہوتا ہے ۔ انہوںنے کہا کہ ہم ناجائز حکمرانوں کا سفینہ ڈبونے نکلے تھے لیکن اپوزیشن والے خود اپنا ہی سفینہ لے ڈوبے ،رابطے میں ہوں نئی تحریک کا آغاز پنجاب سے کریں گے،ان ہائوس تبدیلی اور قبل از وقت انتخابات دونوں دیکھ رہا ہوں

Comments are closed.